Home / General / گوگن ہیم میوزیم اور یو بی ایس کی جانب سے غیر معمولی بین الثقافتی منصوبے کا اجراء

گوگن ہیم میوزیم اور یو بی ایس کی جانب سے غیر معمولی بین الثقافتی منصوبے کا اجراء

گوگن ہیم یو بی ایس میپ گلوبل آرٹ انیشی ایٹو

نیو یارک، 12 اپریل 2012ء/پی آرنیوزوائر/–

سولومن آر گوگن ہیم عجائب خانے  اور فاؤنڈیشن کے ڈائریکٹر رچرڈ آرمسٹرانگ اور یو بی ایس ویلتھ مینجمنٹ کے سی ای او یورگ زیلٹنر نے آج تخلیقی سرگرمی اور دنیا بھر کی ہم عصر مصوری کو دستاویزی شکل دینے کے لیے ایک بلند حوصلہ پانچ سالہ تعاون کا اعلان کیا ہے۔ گوگن ہیم یو بی ایس میپ گلوبل آرٹ انیشی ایٹو جنوبی اور جنوب مشرقی ایشیا، لاطینی امریکہ اور مشرق وسطیٰ و شمالی افریقہ میں ایک جامع پروگرام کے ذریعے فن، فنکاروں اور عجائب خانوں کے محافظین (کیوریٹرز) کے نیٹ ورک کو شناخت اور مدد فراہم کرے گا، منصوبے میں کیوریٹرز کے قیام، گوگن ہیم کی کلیکشن کے لیے حصول، بین الاقوامی دورے کی نمائشیں اور دور رس تعلیمی سرگرمیاں شامل ہیں۔ متعلقہ شعبوں اور رسائی میں بے مثال گوگن ہیم یو بی ایس میپ تخلیقی تبادلوں کا محرک ثابت ہوگا اور علاقائی اور عالمی سطح پر کیوریٹرز، مصوروں اور معلموں کے درمیان طویل پیشہ ورانہ تعلقات کو مضبوط کرنے میں مدد کے ذریعے گوگن ہیم اور دنیا بھر میں دیگر اداروں کی جغرافیائی رسائی کو بڑھانے میں مدد ے گا۔

اپنے پانچ سالہ دور میں منصوبے کی توجہ یکے بعد دیگرے منتخب خطوں پر ہوگی، جس کا آغاز جنوبی اور جنوب مشرقی ایشیا سے ہوگا۔ گوگن ہیم ہر خطے میں سے ایک کیوریٹر کو نیو یارک میں دو سالہ قیام کے لیے مدعو کرے گا، جس کے دوران وہ گوگن ہیم عملے کے ساتھ مل کر اپنے خطے کی نمایاں ترین ثقافتی مشقوں اور دانشورانہ مضامین کی رینج کو ظاہر کرنے والے نئے اور حالیہ فن پاروں کو شناخت کرے گا۔

گوگن ہیم یو بی ایس میپ گلوبل آرٹ انیشی ایٹو کے لیے منتخب ہونے والے کاموں کو سفری نمائشوں میں پیش کیا جائے گا، جن میں سے ہر ایک کا افتتاح نیو یارک میں گوگن ہیم میوزیم میں ہوگا، اور وہ عجائب خانے کی مستقل کلیکشن میں داخل ہو جائیں گے۔ نمائش بعد ازاں زیر نظر خطے اور دنیا کے ایک بڑے شہر میں پہنچے گی۔ پہلی نمائش، جو جنوبی اور جنوب مشرقی ایشیا پر مرکوز ہے، سرما 2013ء میں نیو یارک میں افتتاحی نمائش کے بعد دو مقامات کا سفر کرے گی۔ زیر ہدف یہ شہر سنگاپور اور ہانگ کانگ ہوں گے جہاں گفتگو جاری ہے۔ مجموعی طور پر تین نمائشیں تین مقامات کا سفر کریں گے یعنی کل نو نمائشیں ہوں گی۔ ہر نمائش کو بر مقام اور آن لائن دونوں جگہوں پر عوام کے لیے تعلیمی سرگرمیوں کے متحرک اور خصوصی طور پر تیار کردہ مجموعے کی مدد حاصل ہوگی۔

گوگن ہیم ڈائریکٹر رچرڈ آرمسٹرانگ نے کہا کہ “مصوری کی  تاریخ کے ہمارے زاویہ نظر کا مرکز وسیع تناظر میں مغرب ہی ہے۔ اس منصوبے کے ذریعے ہم اس نظریے کو چیلنج کرنے کی امید کرتے ہیں۔ ہم عصر بصری فنون میں یو بی ایس کی طویل شمولیت کو سراہتےہوئے ہم اس منصوبے میں  شمولیت پر ادارے کے شکر گزار ہیں، جو فن کاروں، شائقین اور متنوع ثقافتی برادریوں کے درمیان اہم روابط کو مضبوط و مستحکم کرے گا۔ بنیاد ڈالنے کے وقت سے ہم سرحدوں سے بالاتر ہو کر ہم عصر مصوری سے زیادہ سے زیادہ حاصل کرنے سے وابستہ ہیں۔ گوگن ہیم یو بی ایس میپ ہمیں اس مقصد کو آگے بڑھانا ممکن بنائے گا کیونکہ ہم نے متاثر کن فنکاروں اور کیوریٹرز سے سیکھا ہے، جو اس پروجیکٹ کے منصوبہ ساز تھے، اور جو ہماری پھیلتی ہوئی سوچ کے سلسلے کو دستاویزی شکل دیں گے۔”

یو بی ایس ویلتھ مینجمنٹ کے سی ای او یورگ زیلٹنر نے کہا کہ “یو بی ایس اور اس کے صارفین مصوری کا مشترکہ جذبہ رکھتے ہیں، اور ہمیں ایسے ادارے کے ساتھ مل کر کام کرنے پر فخر ہے جو گوگن ہیم جیسی ساکھ اور بلندی رکھتا ہے۔ ہم عصر  آرٹ کے طویل المیعاد پشتیبان کی حیثیت سے ہماری نظریں ایسے تعاون پر مرکوز ہیں جو دنیا بھر کے کئی متحرک خطوں میں تخلیقی صلاحیتوں کو مدد دے۔ یہ طاقتور اور بروقت منصوبہ پیشہ ورانہ اور ثقافتی تبادلے کو ترویج دے گا، ہم عصر  آرٹ کو زیادہ اور وسیع تر شائقین تک لائے گا اور مقامی اور بین الاقوامی سطح پر اہم نئے تناظر کھولنے والے فن پاروں کے حصول اور نمائش کو فروغ دے گا۔”

منصوبے کا پہلا مرحلہ جنوبی اور جنوب مشرقی ایشیا کی مصوری پر مرکوز ہوگا، جس کے لیے جون یاپ کو گوگن ہیم یو بی ایس میپ کیوریٹر، جنوبی و جنوب مشرقی ایشیا منتخب کیا گیا ہے ۔ سنگاپور میں مقیم محترمہ یاپ جدید و ہم عصر مصورانہ عجائب خانوں کے کیوریٹریل شعبوں میں کام کر چکی ہیں، جن میں سنگاپور میں ادارہ ہم عصر فنون اور سنگاپور مصوری عجائب خانہ شامل ہے، حال ہی میں انہوں نے 2011ء میں وینس بائی اینیل کے دوران سنگاپور پویلین کے لیے ہو زو نین کے فن پاروں کی نمائش کا انتظام سنبھالا۔

محترمہ یاپ گوگن ہیم کیوریٹریل عملے کے ساتھ کام کا آغاز کر چکی ہیں تاکہ جان سکیں کہ ان کی تحقیق کی جغرافیائی قدر کس پرمقررہے۔گوگن ہیم یو بی ایس میپ کے پہلے مرحلے کے لیے زیر غور ممالک میں افغانستان، بنگلہ دیش، برما (میانمار)، کمبوڈیا، بھارت، انڈونیشیا، لاؤس، ملائیشیا، نیپال، پاکستان، فلپائن، سنگاپور، سری لنکا، تھائی لینڈ اور ویت نام شامل ہیں۔منتخب ممالک میں سے کلیدی مصوروں، تحریکوں، مشترکہ اور تخلیقی نیٹ ورکس کی جانب سے فراہم کردہ نئے اور حالیہ فن پاروں کو شناخت کیا جائے گا اور انہیں گوگن ہیم کی مستقل کلیکشن میں شامل کرنے  کی تجویز دی جائے گی۔ وہ سفری نمائشوں کی بنیاد بھی مرتب کریں گی۔

منصوبے کے دوسرے اور تیسرے مرحلے کی توجہ بالترتیب لاطینی امریکہ اور مشرق وسطیٰ و شمالی افریقہ پر ہوگی ۔ مشاورتی کمیٹی کے اراکین، کیوریٹرز، شہروں، مقامات اور نمائشی دوروں کی تواریخ اور خطوں کے بارے میں مخصوص معلومات کا اعلان رواں سال کیا جائے گا۔

مکمل پریس کٹ کے لیے جائیے: http://www.guggenheim.org/new-york/press-room/releases/press-kits

تشہیری تصاویر کے لیے جائیے: guggenheim.org/new-york/press-room/images

یوزر آئی ڈی: photoservice

پاس ورڈ: presspass

guggenheim.org/MAP
twitter.com/guggenheim
facebook.com/guggenheimmuseum
youtube.com/guggenheim
flickr.com/guggenheim_museum
foursquare.com/guggenheim

ذریعہ: سولومن آر گوگن ہیم فاؤنڈیشن

رابطہ: بٹسی اینس، سولومن آر گوگن ہیم فاؤنڈیشن، +1-212-423-3840، pressoffice@guggenheim.org؛ ایمی وینٹز، روڈر فن آرٹس اینڈ کمیونی کیشن کونسلرز، +1-212-715-1551، wentza@ruderfinn.com

Leave a Reply

Scroll To Top