Home / Press Release / ‫گلوبل ٹائمز: چین اور پاکستان کے درمیان آہنی تعلقات مستحکم، سی پیک کے اہم منصوبوں کو ‘بی آر آئی، چینی جدیدیت سے سب کو فائدہ’ کے طور پر آگے بڑھائیں گے

‫گلوبل ٹائمز: چین اور پاکستان کے درمیان آہنی تعلقات مستحکم، سی پیک کے اہم منصوبوں کو ‘بی آر آئی، چینی جدیدیت سے سب کو فائدہ’ کے طور پر آگے بڑھائیں گے

بیجنگ، 3 نومبر 2022ء/پی آرنیوزوائر/– چین کے صدر شی جن پنگ نے بدھ کو چین کے دورے پر آئے ہوئے پاکستانی وزیر اعظم محمد شہباز شریف سے بیجنگ کے گریٹ ہال آف دی پیپلز میں بات چیت کی اور شہباز شریف ان عالمی رہنماؤں میں شامل ہیں جنہوں نے کمیونسٹ پارٹی آف چائنا (سی پی سی) کی 20 ویں قومی کانگریس کے اختتام کے فورا بعد چین کا دورہ کیا ہے۔

شی جن پنگ نے کہا کہ چین پاکستان کے ساتھ مل کر ہمہ جہت تزویراتی تعاون کی سطح کو بلند کرنے، نئے دور میں مشترکہ مستقبل کے ساتھ قریبی چین پاکستان کمیونٹی کی تعمیر کی کوششوں کو تیز کرنے اور اپنی ہمہ موسمی تزویراتی تعاون پر مبنی شراکت داری میں نئی روح پھونکنے کے لیے تیار ہے۔

20 ویں سی پی سی نیشنل کانگریس کے اہم نتائج پیش کرنے کے بعد صدر شی جن پنگ نے اس بات پر زور دیا کہ چین کھلے پن کی اپنی بنیادی پالیسی کو جاری رکھے گا اور مسلسل ترقی کے ذریعے پاکستان اور باقی دنیا کو نئے مواقع فراہم کرے گا۔ چین اپنی ترقیاتی حکمت عملی اور پاکستان کی حکمت عملی کے درمیان ہم آہنگی کو مزید گہرا کرے گا۔

شی جن پنگ نے نشاندہی کی کہ غیر یقینی دنیا کا سامنا کرتے ہوئے ، دونوں فریقوں کو تاریخ کے دائیں طرف کھڑا ہونا چاہئے ، کثیر الجہتی میکانزم میں اپنا مضبوط تعاون جاری رکھنا چاہئے ، اور بڑے بین الاقوامی اور علاقائی امور پر مل کر کام کرنا چاہئے تاکہ حقیقی کثیر الجہتی ، بین الاقوامی منصفانہ اور انصاف اور ترقی پذیر ممالک کے مشترکہ مفادات کو برقرار رکھا جاسکے اور دنیا میں یقین اور پازیٹیویٹی پیدا کی جاسکے۔

دوطرفہ ملاقات کے بعد جاری ہونے والے مشترکہ بیان کے مطابق فریقین نے دوطرفہ تعلقات کے ساتھ ساتھ علاقائی صورتحال اور بین الاقوامی سیاسی منظرنامے پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔ دونوں فریقین نے ابھرتے ہوئے عالمی چیلنجز کے درمیان چین پاکستان آل ویدر اسٹریٹجک کوآپریٹو پارٹنرشپ کی اہمیت پر اتفاق کیا۔ان ملاقاتوں میں روایتی گرمجوشی، باہمی تزویراتی اعتماد اور مشترکہ خیالات کا اظہار کیا گیا۔

ملاقات میں شہباز شریف نے کہا کہ 20 ویں سی پی سی نیشنل کانگریس کے کامیاب انعقاد کے بعد چین کا دورہ کرنے والے پہلے غیر ملکی رہنماؤں میں شامل ہونا ان کے لیے بہت بڑے اعزاز کی بات ہے۔ یہ دورہ پاکستان اور چین کے درمیان گہری اور آہنی دوستی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

شہباز شریف نے کہا کہ گزشتہ ایک دہائی کے دوران صدر شی جن پنگ کی قیادت میں چین نے عظیم ترقیاتی کامیابیوں کا معجزہ تخلیق کیا ہے۔ چین نے کثیر الجہتی کو برقرار رکھا ہے، عالمی یکجہتی اور تعاون کو فروغ دیا ہے، اور عالمی امن اور ترقی کے تحفظ میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ ایسا کرتے ہوئے چین نے ایک بڑے ملک کی حیثیت سے اپنی ذمہ داریوں کو پورا کیا ہے۔

سنگہوا یونیورسٹی کے نیشنل اسٹریٹجی انسٹی ٹیوٹ کے ریسرچ ڈپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر چیان فینگ نے گلوبل ٹائمز کو بتایا کہ 20 ویں سی پی سی نیشنل کانگریس کے اختتام کے بعد شہباز شریف کو چین کا دورہ کرنے والے پہلے غیر ملکی رہنماؤں میں سے ایک کے طور پر مدعو کرنے سے نہ صرف دونوں فریقوں کے درمیان قریبی تعلقات کا اظہار ہوتا ہے بلکہ ایک بار پھر ثابت ہوتا ہے کہ بین الاقوامی برادری مستقبل میں چین کی ترقی کے بارے میں پرامید ہے۔ اور چین کے ساتھ تعلقات کو مضبوط بنانے کے لئے تیار ہے۔

شہباز شریف نے کہا کہ پاکستان، صدر شی جن پنگ کی جانب سے پیش کردہ گلوبل ڈیولپمنٹ انیشی ایٹو اور گلوبل سیکیورٹی انیشی ایٹو کی مکمل حمایت کرتا ہے۔ یہ بین الاقوامی اور علاقائی امور میں چین کے ساتھ مواصلات اور تعاون کو مضبوط بنائے گا تاکہ عالمی امن اور ترقی میں مثبت کردار ادا کیا جاسکے۔انہوں نے کہا کہ پاک چین دوستی اٹوٹ ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ہمیشہ چین کے ساتھ مضبوطی سے کھڑا رہے گا۔

انہوں نے کہا کہ بیلٹ اینڈ روڈ انیشی ایٹو کے ذریعے چین نے پاکستان کی معاشی ترقی میں حائل دو رکاوٹوں یعنی انفراسٹرکچر اور توانائی کی فراہمی کی کمی کو حل کرنے میں پاکستان کی مدد کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک) تعاون کے پہلے مرحلے کے ذریعے، اس نے ایک ٹھوس بنیاد رکھی ہے اور اگلے مرحلے میں پاکستان کی اقتصادی ترقی کے لئے ایک پلیٹ فارم تعمیر کیا ہے۔

چیان نے کہا کہ چین اور پاکستان کے درمیان قریبی اور موثر اسٹریٹجک ہم آہنگی نے بین الاقوامی تعاون کی ایک مثال قائم کی ہے اور دنیا کو ایک واضح پیغام دیا ہے کہ مختلف سماجی نظاموں، قومیتوں، تہذیبوں اور ترقی کے مراحل والے ممالک اب بھی فائدہ مند تعاون حاصل کرسکتے ہیں۔

شی جن پنگ نے میٹنگ میں کہا کہ دونوں فریقین پاک چین اقتصادی راہداری کی مشترکہ تعاون کمیٹی سے بھرپور استفادہ کریں گے، سی پیک کو زیادہ موثر انداز میں آگے بڑھائیں گے اور اسے اعلیٰ معیار کے بیلٹ اینڈ روڈ تعاون کی مثال بنائیں گے۔

چینی صدر نے کہا کہ چین ڈیجیٹل اکانومی، ای کامرس، فوٹو وولٹک اور دیگر نئی توانائی ٹیکنالوجیز میں تعاون بڑھانے کے لیے پاکستان کے ساتھ مل کر کام کرے گا اور زراعت، سائنس، ٹیکنالوجی اور لوگوں کے ذریعہ معاش سے متعلق تعاون کو آگے بڑھانے کے لیے ٹھوس اقدامات کرے گا۔

شی جن پنگ نے کہا کہ چین پاکستان کی مالی صورتحال کو مستحکم کرنے میں اس کی مدد کے لئے اپنی پوری کوشش جاری رکھے گا۔ چین صنعتی تعاون کو فروغ دینے کے لئے پاکستانی شراکت داروں کے ساتھ مل کر ایک مضبوط صنعت کے ساتھ اپنے صوبوں کی حمایت کرتا ہے اور امید کرتا ہے کہ پاکستان ایک مضبوط کاروباری ماحول فراہم کرے گا۔

مشترکہ اعلامیے کے مطابق 2023 میں سی پیک کی نمایاں کامیابیوں کی ایک دہائی مکمل ہونے کا ذکر کرتے ہوئے دونوں فریقین نے دونوں ممالک کی سماجی و اقتصادی ترقی میں سی پیک کے کردار پر اطمینان کا اظہار کیا۔

دونوں فریقین نے اس بات کا بھی ذکر کیا کہ سی پیک جوائنٹ ورکنگ گروپ برائے بین الاقوامی تعاون اور کوآرڈینیشن (آئی سی سی) کے حالیہ اجلاس میں اس بات پر روشنی ڈالی گئی ہے کہ سی پیک ایک کھلا اور جامع پلیٹ فارم ہے۔ دونوں فریقین نے سی پیک تعاون کے ترجیحی شعبوں جیسے صنعت، زراعت، آئی ٹی، سائنس و ٹیکنالوجی اور تیل و گیس میں سرمایہ کاری کے مواقع سے فائدہ اٹھانے کے لئے دلچسپی رکھنے والے تیسرے فریقوں کا خیرمقدم کیا۔

فیوڈن یونیورسٹی کے انسٹی ٹیوٹ آف انٹرنیشنل اسٹڈیز کے پروفیسر لِن منوانگ نے گلوبل ٹائمز کو بتایا کہ اس حقیقت کی وجہ سے کہ سی پیک کی ترقی کے لئے ایک واضح فائدہ ہے۔ چین اور پاکستان کے مابین اعلی سطحی باہمی اعتماد ، اور پاکستان کی طرف سے چین کے بارے میں اس طرح کا اعتماد ایک ٹھوس اتفاق رائے ہے جس میں تمام بڑی سیاسی جماعتوں اور قوتوں کا اشتراک ہے۔

لن نے کہا کہ رواں سال شروع میں شہباز شریف کے اقتدار میں آنے کے بعد، سی پیک پر چین پاکستان منصوبوں پر زیادہ توجہ مرکوز کی ہے اور بنیادی ڈھانچے کی تعمیر پر مزید پیشرفت کے ساتھ مقام لوگوں کے لئے روزی روٹی کو بہتر ہے۔

شہباز شریف نے کہا کہ پاکستان اعلیٰ معیار کے بیلٹ اینڈ روڈ تعاون کو فروغ دینے کے لیے چین کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے تیار ہے اور امید ہے کہ ایم ایل ون کی اپ گریڈیشن، کراچی سرکلر ریلوے اور دیگر اہم بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں میں چین کی بھرپور حمایت حاصل ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان سیکیورٹی اقدامات کو مزید تیز کرے گا اور چینی اداروں اور اہلکاروں کی حفاظت کے لیے ہر ممکن کوشش کرے گا۔

 

Scroll To Top